آسٹریلیا نے تشدد کی روک تھام کے لیے اقوام متحدہ کے مشن کے جیل کے دورے کو مسترد کر دیا۔

آسٹریلیا نے تشدد کے خلاف اقوام متحدہ کے مشن کو مسترد کر دیا۔
آسٹریلیا نے تشدد کی روک تھام کے لیے اقوام متحدہ کے مشن کے جیل کے دورے کو مسترد کر دیا۔

23 اکتوبر کو اقوام متحدہ کی ویب سائٹ پر شائع خبر کے مطابق اقوام متحدہ کے تشدد سے بچاؤ کے وفد کا دورہ آسٹریلیا تعاون نہ ہونے کے باعث روک دیا گیا۔ جہاں اقوام متحدہ کے وفد نے ریاست نیو ساؤتھ ویلز سمیت کئی مقامات پر جیلوں کا دورہ کرنے کی درخواست کی، وہیں آسٹریلوی سیاست دانوں نے قومی خودمختاری کی بنیاد پر اس دورے سے انکار کر دیا۔

آسٹریلیا کی سب سے بڑی ریاست نیو ساؤتھ ویلز کے گورنر ڈومینک پیروٹیٹ نے تشدد کی روک تھام کے لیے اقوام متحدہ کی ذیلی کمیٹی کے دورے کی درخواست مسترد کیے جانے کا دفاع کیا، جب کہ مقامی جیلوں میں انتظام کی سطح بلند ہے اور آسٹریلیا ایک خودمختار ملک ہے۔

تشدد کی روک تھام سے متعلق اقوام متحدہ کی ذیلی کمیٹی نے اتوار کو ایک بیان میں نشاندہی کی کہ نیو ساؤتھ ویلز کا گھریلو حراستی مرکز کا دورہ مسدود کر دیا گیا اور اس سے تشدد کی روک تھام کے اختیاری پروٹوکول کی ذمہ داریوں کی خلاف ورزی ہوئی۔

اقوام متحدہ کے وفد پر ریاست کوئنز لینڈ کی جیلوں کے دورے پر بھی پابندی عائد کر دی گئی تھی اور اقوام متحدہ کے وفد کو اپنا دورہ ملتوی کرنا پڑا تھا جو 27 اکتوبر یعنی 23 اکتوبر تک جاری رہنا تھا۔

وفد نے کہا کہ وہ اپنی مطلوبہ معلومات اور دستاویزات تک نہیں پہنچ سکے اور آسٹریلیا نے اپنی ذمہ داریاں پوری نہیں کیں۔

تشدد کی روک تھام کے اختیاری پروٹوکول کے مطابق جس کا آسٹریلیا ایک فریق ہے، اقوام متحدہ کی ذیلی کمیٹی برائے انسدادِ تشدد کو ہر فریق کو بتائے بغیر جیلوں، پولیس ہیڈکوارٹرز اور حراستی مراکز کا دورہ کرنے کا اختیار حاصل ہے۔

آسٹریلوی حکومت سے وابستہ ایک تحقیقی ایجنسی نے اس سال کے شروع میں دو رپورٹیں شائع کی تھیں، جن میں کہا گیا تھا کہ ملک میں مقامی لوگوں کو قید کرنے کی بلند شرح کے پیچھے قانون کی تعمیل میں پولیس کی طرف سے نسل پرستی اور امتیازی سلوک ہے۔

یہ معلوم ہوتا ہے کہ زیر حراست افراد میں مقامی لوگوں کا تناسب، جو آسٹریلیا کا 3,3 فیصد ہیں، 29 فیصد ہے۔ آسٹریلیا کے شمالی حصے میں یہ تعداد 84 فیصد تک جاتی ہے۔ کم از کم 30 مقامی باشندے گزشتہ 474 سالوں میں حراست کے دوران ہلاک ہو چکے ہیں۔

چینی وزارت خارجہ نے کہا کہ یہ آسٹریلیا میں انسانی حقوق کے سنگین مسئلے کی عکاسی کرتا ہے۔ Sözcüایس یو ژاؤ لیجیان نے نوٹ کیا کہ آسٹریلیا، جس نے انسانی حقوق کے تحفظ میں خود کو ایک مثال قائم کی ہے، اپنی رپورٹوں کی مکمل تحقیق کرے اور اپنے مسائل خود حل کرے۔

ملتے جلتے اشتہارات

تبصرہ کرنے والے سب سے پہلے رہیں

Yorumlar