چین نے 8 ماہ میں سولر پاور پلانٹس میں 102 بلین یوآن کی سرمایہ کاری کی۔

چین ماہ میں سولر پاور پلانٹس میں ارب یوآن کی سرمایہ کاری کرتا ہے۔
چین نے 8 ماہ میں سولر پاور پلانٹس میں 102 بلین یوآن کی سرمایہ کاری کی۔

چین میں "کاربن کے اخراج کو کم کرنے" کے اہداف کے مطابق صاف توانائی کا استعمال تیزی سے عام ہوتا جا رہا ہے۔ حالیہ برسوں میں ملک میں فوٹو وولٹک سیکٹر کی ترقی توجہ مبذول کراتی ہے۔ 2022 کے جنوری سے اگست کے عرصے میں، یہ اعلان کیا گیا تھا کہ چین میں فوٹو وولٹک پینلز کے ساتھ بجلی کی پیداوار میں سرمایہ کاری پچھلے سال کی اسی مدت کے مقابلے میں تقریباً تین گنا بڑھ گئی ہے۔

چین کی نیشنل انرجی ایڈمنسٹریشن کی طرف سے حال ہی میں جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق سال کے پہلے آٹھ مہینوں میں ملک بھر میں بجلی کی پیداوار میں سرمایہ کاری 18,7 بلین یوآن رہی جو کہ گزشتہ سال کی اسی مدت کے مقابلے میں 320 فیصد زیادہ ہے۔ ان میں سب سے بڑا اضافہ فوٹو وولٹک پینلز سے بجلی کی پیداوار میں سرمایہ کاری تھا۔ آٹھ ماہ کی مدت میں اس شعبے میں سرمایہ کاری 323,8 فیصد بڑھ کر 102 بلین 500 ملین یوآن تک پہنچ گئی۔ دوسری جانب دوسرے درجے کے تھرمل پاور پلانٹس میں بجلی کی پیداوار میں سرمایہ کاری 60,1 فیصد اضافے کے ساتھ 48 ارب یوآن تک پہنچ گئی۔

اگست تک، تھرمل پاور پلانٹس میں بجلی پیدا کرنے کے بعد، فوٹو وولٹک پینلز کے ساتھ بجلی کی پیداوار ملک کا دوسرا سب سے بڑا بجلی کا ذریعہ بن گیا۔ جہاں ملک بھر میں شمسی توانائی سے بجلی پیدا کرنے کی کل نصب صلاحیت سالانہ بنیادوں پر 27,2 فیصد بڑھ کر 350 ملین کلوواٹ ہو گئی، ہوا سے بجلی پیدا کرنے کی نصب شدہ صلاحیت 16,6 فیصد سالانہ اضافے کے ساتھ 340 ملین کلوواٹ سے تجاوز کر گئی۔

چینی حکومت کی جانب سے نافذ کی گئی مختلف ترغیبی پالیسیوں کی بدولت فوٹو وولٹک سیکٹر میں کام کرنے والے گھریلو کاروباری ادارے بھی تیزی سے ترقی کر رہے ہیں۔ اعداد و شمار کے مطابق، 2021 میں، عالمی منڈیوں میں 70 فیصد سے زیادہ فوٹو وولٹک ماڈیول چین نے پیش کیے تھے۔ چین میں، جو کہ نئی توانائی کے میدان میں دنیا میں پہلے نمبر پر ہے، فوٹو وولٹک کے شعبے میں خدمات انجام دینے والی 10 سے زائد کمپنیوں کی سالانہ آمدنی گزشتہ سال تک 10 بلین یوآن کی حد سے تجاوز کر گئی۔ ان میں سے پانچ کی سالانہ آمدنی 30 بلین یوآن سے زیادہ ہے۔

قابل تجدید توانائی نصب شدہ طاقت 1 بلین کلوواٹ سے تجاوز کر گئی۔

چین نے 2030 تک کاربن کے اخراج میں چوٹی تک پہنچنے اور 2060 تک کاربن غیر جانبداری حاصل کرنے کے اہداف مقرر کیے ہیں۔ اسی وجہ سے حالیہ برسوں میں ملک میں قابل تجدید توانائی کے استعمال کی تیزی سے حوصلہ افزائی کی گئی ہے۔

اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ 2021 میں توانائی کی کل کھپت میں چین کا حصہ ایک دہائی پہلے کے مقابلے میں 11 فیصد پوائنٹس بڑھ کر 25,5 فیصد ہو گیا ہے۔ دوسری طرف ملک میں کوئلے کی کھپت کا حصہ دس سال پہلے کے مقابلے میں 12,5 پوائنٹس کم ہو کر 56 فیصد رہ گیا۔ اس کے علاوہ، ملک میں ہوا اور شمسی توانائی پر مبنی بجلی پیدا کرنے کی نصب شدہ طاقت میں 2012 کے مقابلے میں گزشتہ سال 12 گنا اضافہ ہوا، اور سالانہ نئی توانائی سے بجلی کی پیداوار پہلی بار 1 ٹریلین کلوواٹ سے تجاوز کر گئی۔

چین میں قابل تجدید توانائی پر مبنی بجلی پیدا کرنے کی نصب صلاحیت 1 ارب 100 ملین کلوواٹ سے تجاوز کر گئی ہے۔ پانی، ہوا اور شمسی توانائیوں پر مبنی بجلی پیدا کرنے کی نصب شدہ طاقت کے لحاظ سے چین دنیا میں پہلے نمبر پر ہے۔

ملتے جلتے اشتہارات

تبصرہ کرنے والے سب سے پہلے رہیں

Yorumlar